غزل

قیصرؔعباس

شہر کی رسم  ہے  پرانی  وہی

سازشیں  تازہ  ہیں  کہانی  وہی

 

درد کے موسموں سے کیا امید

سب  بلائیں  ہیں  آسمانی  وہی

 

پھرسےکھینچوحفاظتوں کےحصار

پھ ہے دریاؤں کی   روانی  وہی

 

سارے  آثار ہیں جدائی   کے

سرمئی  شام  ہے سہانی وہی

 

خاربوئے توزخم سینچیں گے

وقت  دہرائے گا  کہانی  وہی

 

ہم فقیروں کے حوصلےدیکھو

زخم جتنے ہوں سرگرانی وہی

 

یوں تو صدیاں گزرگئیں  قیصرؔ

دل کےصدمے تری جوانی وہی

غزل

ڈاکٹر قیصؔرعباس

 

اب  جدا ئی کے  سفر آئیں  گے

رات  ٹوٹے گی تو گھرآئیں گے

 

جتنے آئیں  گے ثمر ان کے  ہیں

اپنے حصے میں شجر آئیں گے

 

نیند  آنکھوں  میں  اترآئے  گی

جب ترے خواب نظر آئیں   گے

 

صبح  آئے  گی  اسے  آنا    ہے

پہلے راتوں کے کھنڑرآئیں  گے

 

شب گزیدہ ہیں  پریشاں چہرے

موسم  گل میں  نکھر آئیں گے

 

سارے موسم ہیں ہمارے موسم

شاخ پر پھرسے ثمر  آئیں گے

 

مشعلیں  اپنی   جلائے  رکھنا

قافلے   اور ادھر آئیں    گے

 

بھیگی  پلکوں پہ  سجانا   قیصؔر

راہ میں جتنے بھی سر آئیں گے

غزل

غزل

ڈاکٹر قیصر عباس

 

خوابوں کے انبار لگاتا  جاتا  ہے

دل پاگل ہے، خار بچھاتا جاتا ہے

 

پھر دیوانے سینہ تانے نکلے  ہیں

پھروہ ظالم  دار سجاتا جاتا   ہے

 

ہم بھی خستہ دیواروں کی مانند ہیں

ہر موسم  اک وار لگا تا  جاتا  ہے

 

اک دیوانہ تپتی دھوپ کےصحرا میں

سپنوں  کے گلنا ر اگاتا   جاتا   ہے

 

کہتے ہیں پنگھٹ کی جانب شام ڈھلے

اب  بھی   وہ  دیدار  لٹاتا  جاتا   ہے

 

گاؤں چھوڑ کے جانے والا ہر گبھرو

پرکھوں  کی  دیوار گرا تا  جاتا  ہے

 

لفظوں کی  مٹی سے  کاغذ پر قیصر

شعروں کی  بیگار لگاتا  جاتا    ہے

Ghazal

غزل

قیصرؔ عباس

چو مکھی  مار  کے  یاور    نکلا

رات  کے  غار سے   امبر   نکلا

 

خود کو چھوڑ آیا تھا   دروازے  پر

جب  میں گھر  چھوڑ کے  باہر نکلا

 

ایک  دوزخ  تھی  تہہ  آب    رواں

آگ  میں  جل  کے   سمندر   نکلا

 

امن  کی   فاختہ   اڑتی     کیسے

وار  ایسا  تھا   کہ    شہپر   نکلا

 

دھوپ  حیراں تھی کہ بارش لے  کر

بانجھ   صحرا  سے   سمندر   نکلا

 

اس خرابے میں تو مجھ سا کم ظرف

ہر  تومندار    سے       بہتر    نکلا

 

عمر کی   شام    بھی آ پہنچی   تھی

جب  تلک   دل   سے  ستم گر  نکلا

 

ایک   چہرہ تھا  تعاقب میں  مرے

کب  تری  یاد   سے   قیؔصر نکلا