غزل

قیصرؔعباس

شہر کی رسم  ہے  پرانی  وہی

سازشیں  تازہ  ہیں  کہانی  وہی

 

درد کے موسموں سے کیا امید

سب  بلائیں  ہیں  آسمانی  وہی

 

پھرسےکھینچوحفاظتوں کےحصار

پھ ہے دریاؤں کی   روانی  وہی

 

سارے  آثار ہیں جدائی   کے

سرمئی  شام  ہے سہانی وہی

 

خاربوئے توزخم سینچیں گے

وقت  دہرائے گا  کہانی  وہی

 

ہم فقیروں کے حوصلےدیکھو

زخم جتنے ہوں سرگرانی وہی

 

یوں تو صدیاں گزرگئیں  قیصرؔ

دل کےصدمے تری جوانی وہی

Poem for Edhi

Edhi Face

 

 

 

 

 

 

 

اب ہمیں کون دفنائے گا؟

قیصؔرعباس

بے خواب نگر کے جلتے

گلی کوچوں،

اور بارود ذدہ دھوؤں کے غبار میں گھرا،

پھٹا پرانا جوتا پہنے،

برسوں پرانا لبادہ اوڑھے،

اورتقریبا ایک صدی کا لاغر بدن سنبھالے،

چاروں اور

بکھرتے آنسوؤں کو

بو سیدہ جھولی میں سمیٹتا،

نومولود ’’گناہوں‘‘ کی زندہ پوٹلیوں کو

 گلے لگاتا،

اور لہولہان جسموں کی

بے جان کرچیوں کو جوڑکر

دفن کرتا،

 ایک تنہا مسافر

ابھی کچھ دیر پہلے

افق کےاس پار اترا

تونئےسورج کی

ابھرتی کرنوں

اورمسکراتی شفق کے جلو میں

اک نئے جہان کے باسی

 اس کے منتظر تھے،

مگر نہ جانے کیوں

کچھ چیختی آوازیں

ابھی تک

اس کے تعاقب میں تھیں:

ایدھی بابا !

اب ہمیں کون دفنائے گا؟‘‘

____

 

غزل

ڈاکٹر قیصؔرعباس

 

اب  جدا ئی کے  سفر آئیں  گے

رات  ٹوٹے گی تو گھرآئیں گے

 

جتنے آئیں  گے ثمر ان کے  ہیں

اپنے حصے میں شجر آئیں گے

 

نیند  آنکھوں  میں  اترآئے  گی

جب ترے خواب نظر آئیں   گے

 

صبح  آئے  گی  اسے  آنا    ہے

پہلے راتوں کے کھنڑرآئیں  گے

 

شب گزیدہ ہیں  پریشاں چہرے

موسم  گل میں  نکھر آئیں گے

 

سارے موسم ہیں ہمارے موسم

شاخ پر پھرسے ثمر  آئیں گے

 

مشعلیں  اپنی   جلائے  رکھنا

قافلے   اور ادھر آئیں    گے

 

بھیگی  پلکوں پہ  سجانا   قیصؔر

راہ میں جتنے بھی سر آئیں گے

صنف نازک کے نام

ڈاکٹر قیصؔرعباس

 

شب کی بے خواب رداؤں میں

سمٹتے ہوئے پتوں کی صدا

مانند ہوئی

شاخ در شاخ عزاخانۂ غم

کُھل بھی گئے

ہرشجرغنچہُ جاں

اپنی ہتھیلی پہ لئے

روبھی چکا

بوالہوسی رسم جہاں

ہو بھی چکی

شاخ در شاخ

خزاؤں کے نقیب

پنکھڑیوں کا ہراک رشتۂ جاں

توڑچکے

کھلتے پھولوں کا لہو

چوس کے

ڈھانچوں کو

سرراہ گزر چھوڑچکے

اورپھرموردالزام بھی

گل ہی ٹھرے

چارہ گرو

کچھ توکرو

 

 

غزل

غزل

ڈاکٹر قیصر عباس

 

خوابوں کے انبار لگاتا  جاتا  ہے

دل پاگل ہے، خار بچھاتا جاتا ہے

 

پھر دیوانے سینہ تانے نکلے  ہیں

پھروہ ظالم  دار سجاتا جاتا   ہے

 

ہم بھی خستہ دیواروں کی مانند ہیں

ہر موسم  اک وار لگا تا  جاتا  ہے

 

اک دیوانہ تپتی دھوپ کےصحرا میں

سپنوں  کے گلنا ر اگاتا   جاتا   ہے

 

کہتے ہیں پنگھٹ کی جانب شام ڈھلے

اب  بھی   وہ  دیدار  لٹاتا  جاتا   ہے

 

گاؤں چھوڑ کے جانے والا ہر گبھرو

پرکھوں  کی  دیوار گرا تا  جاتا  ہے

 

لفظوں کی  مٹی سے  کاغذ پر قیصر

شعروں کی  بیگار لگاتا  جاتا    ہے

تعبیر

تعبیر

ڈاکٹر قیصرعباس

 

صبح دم آج

 مری نیند بھری آنکھ

گئ شب کے حسیں خواب کی

ہلکی سی جھلک

 لے کے اٹھی۔

دور وادی میں کہیں

ناچتے گاتے بچے

پھول چہروں پہ سجی

کھیلتی، ہنستی آنکھیں

کھلکھلا تی ہوئی شاموں میں

جوانی کی مہک

رقص کرتی ہوئی

راتوں میں

حنا کے صد رنگ

لہلہلاتے ہوےؑ کھیتوں میں

نئی فصل کی بھینی خوشبو

زندگی رنگِ شفق

رنگِ صدا

رنگِ بہار۔

کانپتے ہاتھ مرے

ایک دعا کو اٹھے

اےخدا !

آج مرے خواب کی

تعبیر ملے یا نہ ملے

معجزے ہوں کہ نہ ہوں

پھربشارت نئی صبحوں

ملے یا نہ ملے

اے خدا !

أج کوئی اچھی خبر

شہرِ آشوب سے

اس شہرِ بتاں تک پہںچے۔

 

ّّّّّّّّّّّّّّ

Ghazal

غزل

قیصرؔ عباس

چو مکھی  مار  کے  یاور    نکلا

رات  کے  غار سے   امبر   نکلا

 

خود کو چھوڑ آیا تھا   دروازے  پر

جب  میں گھر  چھوڑ کے  باہر نکلا

 

ایک  دوزخ  تھی  تہہ  آب    رواں

آگ  میں  جل  کے   سمندر   نکلا

 

امن  کی   فاختہ   اڑتی     کیسے

وار  ایسا  تھا   کہ    شہپر   نکلا

 

دھوپ  حیراں تھی کہ بارش لے  کر

بانجھ   صحرا  سے   سمندر   نکلا

 

اس خرابے میں تو مجھ سا کم ظرف

ہر  تومندار    سے       بہتر    نکلا

 

عمر کی   شام    بھی آ پہنچی   تھی

جب  تلک   دل   سے  ستم گر  نکلا

 

ایک   چہرہ تھا  تعاقب میں  مرے

کب  تری  یاد   سے   قیؔصر نکلا

منادی

 منا دی

ڈاکٹر قیصرعباس

 

!جاگو

کہ مٹی کے گھروندوں کی

تمام بستیاں

پہاڑوں سے اترتے

مون سون کے پانیوں کی زد میں ہیں

چراگاہیں، میدان

گلیاں، بازار

مکان اور چوبارے

 کب کے زمیں بوس ہوے۔

!پکارو نوح کو

کہ سمندر کی تلاش میں

دوڑتی لہریں

چنگھاڑتا آسمان سروں پر اٹھاے

بچوں کا کل، بوڑھوں کا آج

اورجوانوں کے خواب

سب کچھ نگل رہی ہیں۔

!آواذ دو خضر کو

کہ منزلیں، فاصلے، راستے، پگڈ نڈ یاں

خانقاہیں، سرا ییں

اور ہنستی آنکھوں کے تمام منظر

اوجھل ہوے۔

قدم بڑھاؤ خشکیوں کی طرف

اور غورسے سنو

کہ کو بہ کو

:منادی ہوچکی

لوٹ جاؤاپنے اپنے گھروں کو

!کہ یہ سب تمہارے ہی گناہوں کا عذاب ہے

 

 

آدھا آدمی

( دو تہذیبوں میں بٹاہوا تارک وطن ) 

 

ڈاکٹر قیصرعباس 

آسمانوں  سے اتری

اجنبی مخلوق

یا خود کلامی میں

 ڈوبی صدائے بازگشت

ہنستا، گاتا

پرندِآوارہ

 دہکتےخوابوں میں

جلتا  پیکر

یا ادھ کھلے

دروازوں سے جھانکتا

معصوم با لک۔

بے نام جزیروں کے

اندھے کنوؤں سے

نکلنے کی کوشش ِنا کام میں

ان دیکھے

ہزار جگنوؤں 

کے تعاقب میں دوڑتا

 ہانپتا کانپتا

آدھا آدمی؟

جو کبھی

اپنادل چیر کے

 ندی کےبچھڑتےہوئے

دو کناروں پر

دفن کر آیا تھا

اور اب ان دونوں

کناروں پر کھڑا

اترتی بوندوں کے موسم میں

دن چڑھے

اپنے ہی پگھلتے پنجر

کا استقبا ل کرتا ہے۔

۔۔۔۔

 

 

پاتال گھر

ڈاکٹرقیصرعباس

 (ماہنامہ تخلیق نو،  نومبر ۲۰۱۴  )

سناہے

شہر کی گہری تہوں میں

ایک بستی ہے

جہاں بازار، نہ گلیاں

 نہ کو چے ہیں

فقط کھنڈرات میں لپٹا کوئی

ویران سا  پا تال گھر ہے

جہاں بس

 دھول سے لپٹی ہیں ذنجیریں

کئی ویران آ نکھیں

کھڑکیوں سے جھانکتی ہیں

اور رکھوالے ہیں بندوقیں سنبھالے

سناہے نیم مردہ ، نیم زندہ لوگ

 اس پاتال گھر میں

زندگی بیگار کرتے ہیں

    امیرشہر سے

ان کو شکایت تھی

بہت پہلے 

اسی پاداش میں ان کو

 یہاں بھیجا گیا تھا

مگر ان کو کسی سے اب

شکایت بھی نہیں ہے

کہ زندہ ہیں ابھی تک

سانس لیتے ہیں

غنیمت ہے

وگرنہ ان سے پہلے

اسی پاتال گھر میں

لوگ بے نام و نشاں

گاڑے گئے تھے

یہاں پاتال میں

أ نے کے رستے ہیں

 مگر باہر کا دروازہ نہیں ہے

یہاں جوآگیا

وہ پھر کبھئ واپس نہیں جاتا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔